کورونا(کووڈ ١٩) کی وجہ سے بند ہوئے والی دکانیں شاپنگ مال بازار کتنے بھی کھل جائے لیکن ہم عید صرف اور صرف نماز، روزہ، اور قرآن کی تلاوت کر کے ہی منائیں گے. کیوں کہ عام دنوں کی طرح ہماری مسجدوں میں نمازیوں کا نماز پڑھنے جانا بند، تراویح بند، طواف بند، ، تو پھر ہم نیو کپڑے، جوتے، چپل، و دیگر تمام عید کی خوشیاں کیسے منا سکتے ہیں.
ہم گورنمنٹ سے اپیل کرتے ہیں کہ لوک ڈاءون پوری طرح رکھیں اس میں کسی بھی طرح کی رعایت برتنے کی ضرورت نہیں.
شاپنگ سینٹر اور بازار اسپیشل مسلمانوں کے لئے کھولنے کی مہربانی نہ کی جائے. ان سب کے کھلنے سے لوگ ڈاءون کے خلاف ورزی ہوگی. جیسے کے اجتماعی پروگرام کرنے کے لیے منع کیا گیا ہے… اس سے مسلمان جب عید کی خریداری کے لئے بازار جائیں گے اور بازاروں میں بھیڑ ہوگی اس سے کورونا کے ہونے کا خدشہ ہوگا اور اس کی ذمہ داری مسلمانوں کے سر آئے گی. کیونکہ سوشل دسٹینس پر لوگ عمل پیرا نہیں ہو سکتے..
جب مسلمان گورنمنٹ کی گائیڈ لائن پر عمل کرکے مسجدوں میں جانا چھوڑ سکتے ہیں اور گھروں میں عبادت کر سکتے ہیں تو کیا ہم اپنے وطن عزیز کی بھلائی کے لیے بازاروں کی خریداری کو نہیں چھوڑ سکتے
جی ضرور چھوڑ سکتے ہیں…
پوری کوشش کریں نیو کپڑے کی خرید و فروخت کے روپیوں سے اپنے رشتہ داروں اور مفلس و نادار کی مدد کریں.
اور اپنے رویوں کی فضول خرچی نہ کریں کیونکہ نہ جانے کیسے حالات رہیں جس سے ہم دوسروں کے آگے ہاتھ پھیلانے سے بچ جائیں اور اللہ نے آپکو دیا ہے تو خوب مدد بھی کریں.
صاحب نصاب اپنے مال کی زکوٰۃ نکال کر غریبوں کو اسکا حقدار بنائیں اور غریبوں کی خوشیوں میں برابر کے شریک رہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

محمد ارشد خان رضوی فیروز آبادی
مہتمم مدرسہ حبیبیہ کشمیری گیٹ فیروزآباد

Facebook Comments