نئی دہلی:شہریت ترمیمی قانون کے خلاف ملک کی بیشتر ریاستوں میں ایک طرف جہاں احتجاج ومظاہرے کا سلسلہ جاری  ہے وہیں دوسری طرف اپوزیشن پارٹیاں بھی دم لینے کا نام نہیں لے رہی ہیں ،بنگال میں ممتابنرجی ،یوپی میں اکھلیش یادو،بہار میں تیجسوی یادو اورساوتھ انڈیا میں اسٹالن نے شہریت ترمیمی قانون کے خلاف مورچہ سنبھال رکھا ہے۔اس بیچ کانگریس پارٹی کے ماتحت تمام ریاستوں نے اعلان کردیا ہے کہ وہاں این آرسی نہیں ہوگا اور شہریت ترمیمی قانون کو نافذنہیں کیا جائے گا،اس بیچ کیرل کی حکومت نے ایک قدم آگے بڑھ کر ایک نیا فیصلہ کر لیا ہے اور کیرل کی اسمبلی میں  سی ایم پنرائے وجین نے ایک قرار داد پیش کردی اور اسے منظور بھی کروا لیا ہے۔کیرل اسمبلی میں آج شہریت ترمیمی قانون کو ریاست میں نافذ نہ کرنے سے متعلق تجویز کو منظوری دی گئی ہے ۔اس کا مطلب یہ ہوا کہ کیرل میں سی اے اے کیلئے کوئی جگہ نہیں ہے اور مرکز کا یہ قانون کیرل میں نافذ العمل نہیں ہوگا۔این آر سی اور این پی آر پر پہلے ہی کیرل سرکار صاف انکار کرچکی ہے اور اب سی اے اے کو بھی کیرل نے ٹھکرا دیا ہے۔اب ممکن ہے کہ یہ راستہ دیگر ریاستوں کو بھی نظرآئے اور اپنی اپنی اسمبلی میں سی اے اے کے خلاف قرار داد منظور کروانے کی کوشش کرے۔

Facebook Comments