نئی دہلی:جامعہ ملیہ اسلامیہ میں گزشتہ دو دنوں سے طلبا شہریت ترمیمی بل کے خلاف مظاہرہ کررہے تھے ،آج بھی طلبا جامعہ ملیہ کے مین گیٹ پر بڑی تعداد میں جمع ہوکر احتجاج کررہے تھے اس کے بعد طلبا کیمپس کے اندر جاکر حکومت کے خلاف مظاہرہ کرنے لگے ،دن بھر یہ سلسلہ جاری رہا،لیکن شام ہوتے ہی پولیس کی بڑی تعداد کیمپس کے اندر داخل ہوئی اور طلبا و طالبات پر بڑی بے رحمی کے ساتھ لاٹھی چارج کیا ہے،آنسو گیس کے گولے داغے گئے ہیں ،جس میں کئی طلبا کے زخمی ہونے اور کئی طالبات کے بیہوش ہونے کی خبر ہے۔یہ دوسری بار ہے جب جامعہ کے طلبا پر دہلی پولیس نے بے رحمی سے لاٹھی چارج کیا ہے۔شام کے چھ بجتے ہی پولیس کی بڑی تعداد گیٹ نمبر سات سے جامعہ میں داخل ہوئی اور اندھا دھند لاٹھی چارج کرنے لگی ،جس میں کئی طلبا بری طرح سے زخمی ہوگئے ہیں اور کئی طالبات کے بیہوش ہونے کی خبر ہے۔ذرائع کا کہنا ہے کہ دہلی پولیس نے کیمپس کے اندر آنسو گیس کے گولے داغے ہیں جس کی وجہ سے طالبات کو کافی نقصان کا سامنا کرنا پڑا ہے۔

ادھر جامعہ سے دس قدم کی دوری پر واقعہ بھرت نگر جولینا میں تین ڈی ٹی سی بسوں میں آگ لگادی گئی ہے۔جامعہ انتظامیہ کا کہنا ہے کہ جامعہ کے طلبا نے آگ نہیں لگائی ہے چونکہ جامعہ کے طلبا کیمپس کے پاس ہی مظاہرہ کررہے تھے ،وہیں جو ویڈیو دیکھنے کو مل رہی ہے اس میں صاف نظر آرہا ہے کہ پولیس والے بس میں پٹرول ڈال کر آگ لگانے کی کوشش کررہے ہیں۔

 

Facebook Comments