ممبئی:گھوٹالے میں پھنسے پنجاب اینڈ مہاراشٹر کو آپریٹیو (پی ایم سی)بینک کے صارفین کو اپنی محنت کی کمائی ڈوبنے کا ڈر اس قدر ستارہا ہے کہ اس ڈر کی وجہ سے ان کی جان جاری ہے اور اب تک ملی جانکاری کے مطابق گزشتہ ۲۴ گھنٹوں کے اندر پی ایم سی کے دو صارفین کی دل کا دورہ پڑنے سے موت ہوگئی ہے۔جبکہ ایک شخص نے خودکشی کی ہے،اس طرح سے پی ایم سی معاملے میں اب تک تین صارفین کی جان جاچکی ہے۔دل کے دورہ کا شکار ہونے والے سنجئے گلاٹی کے اہل خانہ کے ۹۰ لاکھ روپئے پی ایم سی میں جمع تھے۔جبکہ خودکشی کرنے والے نویدتا بجلانی پیشے سے ڈاکٹر تھی، اور ایک دوسرے شخص فتتومل پنجابی کا بھی دل کا دورہ پڑنے سے انتقال ہوگیا ہے۔
اوشیوارا کے رہنے والے سنجئے گلاٹی نے گزشتہ سوموار کو ۸۰ سال کے والد سی ایل گلاٹی کے ساتھ عدالت کے باہر مظاہرہ کا حصہ تھے۔سی ایل گلاٹی نے بتایا کہ زیادہ ذہنی تناو کی وجہ سے سجے کو سوموار کی رات کو عشائیہ کے بعد دل کا دورہ پڑا جس کی وجہ سے ان کی جان چلی گئی۔حالانکہ سوموار کو ہی آربی آئی نے پیسے نکالنے کی حد بڑھاکر چالیس ہزار روپئے کردی تھی۔گلاٹی جیٹ ایئرویز میں ملازم تھے۔مگر اپریل میں ان کی نوکری چلی گئی تھی ۔وہ بینک میں جمع رقم سے اپنا گھر چلارہے تھے،ان کا بیٹا بیمار چل رہا تھا جس کے علاج کیلئے انہیں پیسوں کی سخت ضرورت تھی،وہ اس پورے معاملے میں بری طرح سے پریشان تھے۔
فتتومل منگل کے دن دوپہر کے وقت بینک جانے کیلئے گھر سے نکلے تھے ،اس دوران اسے دل کا دورہ پڑ گیا،جب تک اسپتال لے جایا جاتا ان کی جان چلی گئی۔
وارسوا علاقےمیں رہنے والی ڈاکٹر نویدتا بجلانی بھی پی ایم سی صارفین میں سے ایک ہے جنہوں نے گزشتہ رات خودکشی کرلی ہے،پولیس اس خودکشی کے اصل وجوہات کی تلاش میں ہے ،البتہ مانا یہ جارہا ہے کہ پی ایم سی میں ان کا کافی پیسہ جمع تھے اور بینک کی موجودہ حالت کی وجہ سے وہ بہت زیادہ پریشان تھی۔وہ مسلسل نیند کی دوا کھا کر سورہی تھی۔

Facebook Comments