لندن سے جناب فہیم اختر کی خصوصی تحریر

ہم خوش نصیب ہیں کہ اس سال بھی ہمیں رمضان کا مبارک مہینہ نصیب ہوا ہے۔رمضان کی آمد اور اس مہینے کی برکت سے ہم سب فیضاب ہوتے ہیں۔ دنیا بھر کے مسلمان اس مہینے میں روزہ رکھتے ہیں اور زیادہ سے زیادہ عبادت کر کے اپنے آپ کو اللہ سے قریب ہونے کی عمدہ مثال پیش کرتے ہیں۔ تاہم بہت سارے ممالک میں پریشانِ حال مسلمان تن کو ڈھانکنے کے لئے کپڑے سے لے کر غذا تک کو بھی محروم رہتے ہیں۔ ان مسلمانوں کے ساتھ ملک کی بد حالی، خانہ جنگی ،بے روزگاری اور غربت جیسی ایسی وجوہات ہیں جس سے وہ بیچارے دوچار ہیں۔ تاہم ان کے لئے مختلف ممالک کے لوگوں کے زکوة کے ذریعہ امداد پہنچایا جاتا ہے۔ اس حوالے سے برطانیہ کے مسلمان بھی نمایاں رول ادا کرتے ہیں۔
لندن سمیت پورے برطانیہ میں پیر 6مئی سے مسلمانوں نے روزہ رکھنا شروع کیا ہے۔ برطانیہ میں مختلف شہروں میں وہاں کے مقامی وقت کے مطابق افطار کھولا جاتا ہے۔فی الحال لندن میں افطار کا وقت 8:40ہے جو روز بروز بڑھتا جا ئے گا۔ زیادہ تر مساجد میں افطار کا انتظام کیا جاتا ہے جہاں لوگ جمع ہو کر اجتماعی افطاری کرتے ہیں۔ اس کے علاوہ رات گیارہ بجے سے تراویح بھی پڑھی جاتی ہے۔لندن کے معروف سینٹ پالس کیتھیڈرل میں پہلی بار بشپ سیرا مولالی اور لندن کے مئیر صادق خان نے دعوتِ افطار کا اہتمام کیا۔ جس میں تمام مذاہب کے نوجوانوں کو دعوت دی گئی۔اس موقعہ پرصادق خان نے کہا کہ ’ایک شہر کے طور پر ، ہم فرق کو برداشت کرتے ہیں، لیکن ہم اس کا احترام کرتے ہیں، اس کا جشن مناتے ہیں اور اسے گلے لگاتے ہیں‘۔
ہندوستانی آبادی والے علاقوں کی کئی دکانوں میں افطار بھی بکتا ہے جس سے اُن لوگوں کو آسانی ہوجاتی ہے جن کا کوئی خاندان نہیں ہوتا اور جو بیرون ِ ممالک سے برطانیہ بطور طالب علم رہائش پزیرہیں ۔اس کے علاوہ بہت سار ی جگہوں پر اُن بے گھر لوگوں کو بھی کھاناکھلایا جاتا ہے جو بحالتِ مجبوری راستوں پر اپنی زندگی گزار رہے ہیں۔
آئیے آج رمضان کے مہینے میں خود کا جائزہ لے اور اس بات کو محسوس کریں کہ کیا ہم رمضان کا مہینہ صرف بھوکے پیاسے رہ کر گزار دیتے ہیں یا اس سے ہمیں اللہ سے قربت کا احساس ہوتا ہے ۔رمضان کی فضیلت کیاہے ۔کیا ہمیں علم ہے کہ ہم نے جو عبادت کی اس کا مقصد کیا تھا ۔کیا ہم نے کسی کوجانے انجانے میں تکلیف پہنچائی ہے۔ کیا ہم نے صرف بھوکے پیاسے رہ کر روزے مکمل کئے ہیں۔کیا ہم نے نیت کی ہے۔ ایسے کئی سولات ہیں جنہیں اپنے آپ سے پوچھناچاہیے۔ تاہم مجموعی طور پر رمضان کی فضیلت اور عبادت سے زیادہ تر لوگ واقف ہیں اور وہ اپنی عبادت اللہ کے حکم کے مطابق ہی کرتے ہیں۔
اگر روزے اور عبادت کی اہمیت کو سمجھے بغیر رمضان کا مہینہ گزارا جائے تو یہ ا یک محض رسم ہوگی اور ہم محض رمضان کو رسمی طور پر مناتے رہیں گے۔ رمضان کے متعلق حضرت محمد ﷺ نے ہمیں صبر، ہمدردی، اللہ سے قربت، دن اور رات کی عبادت،قرآن کی تلاوت اور اس کوسننے کی ہدایت دی ہے۔ اسی لئے حضرت محمد ﷺ نے رمضان کی عبادت اور اس بابرکت مہینے کی عبادت کے بدلے ڈھیروں نیکیاں کمانے کا بہترین موقعہ بتایا ہے۔ حضور ﷺ نے یہ بھی کہا ہے کہ اس مہینے کی عبادت سے ہمیں اپنے گناہ کو معاف کروانے کا موقعہ ملتا ہے ۔
روزے ہم اللہ کو خوش رکھنے کے لئے اور حضرت محمد ﷺ کے نقشِ قدم پر چلنے کے لئے رکھتے ہیں ۔عام طور پر روزے رکھنے سے ہمارے وزن میں گراوٹ آتی ہے لیکن ہمیں کبھی یہ سوچ کر یا نیت کر کے روزے نہیں رکھنے چاہئیں کہ ہمارا وزن روزے رکھنے سے کم ہو جائے گا۔ اس بات کا خیال رکھنا چاہئے کہ ہمارے ذہن میں ایسی بات نہ آئے اور دورانِ گفتگو روزے کے حوالے سے وزن کو کم کرنے کا ذکر ہم ہر گز نہ کریں۔
روزہ ایک روحانی ورزش ہے جو ہمیں اللہ سے قریب کرتی ہے۔ اکثر ہم غفلت میں افطار کے دوران کھانے اور پینے کی چیزوں پر زیادہ دھیان دیتے ہیں۔تاہم ایسا ہونا ایک فطری عمل ہے کیونکہ دن بھر بھوکے رہنے کے بعد ہمیں اچھی غذا کی خواہش اور ضرورت ہوتی ہے۔ لہذاٰ ہم اپنا زیادہ وقت چیزوں کی خریداری میں صرف کر دیتے ہیں جس سے رمضان کی عبادت پر اثر پڑتا ہے۔ہمیں کوشش کرنی چاہئے کہ رمضان میں اپنی خواہشات اوربے جا خوشیوں کو بالائے طاق رکھ کر روزے کی اہمیت کو برقرار رکھیں۔
رمضان میں سحری کے وقت جاگنے سے ہمارے سونے کے اوقات میں تبدیلی آجاتی ہے۔ کیونکہ تراویح کا پڑھنا اور سحری میں جاگنے کی وجہ سے ہماری نیند میں کافی خلل پڑتا ہے۔ جس کا نتیجہ یہ ہوتا ہے کہ کچھ لوگ روزے کے دوران نیند سونا پسند کرتے ہیں۔ ایسا کرنے سے ہم رمضان کی عبادت کو کھو دیتے ہیں اور ہم اس مبارک مہینے کی برکت سے محروم رہ جاتے ہیں۔ کچھ لوگ روزے کے دوران وقت کو گزارنے کے لئے ٹی وی دیکھتے ہیںیا دیگر تفریحات کا سہارا لیتے ہیں جو کہ ایک غیر ضروری بات ہے۔حضرت محمد ﷺ نے کہا ہے کہ “اگر لوگوں کو رمضان کی اہمیت کا علم ہوجائے تو وہ پورے سال رمضان مہینے کی چاہت کریں گے”۔
ایمان والوں کے لئے دعا اور عبادت شیطان اور انا سے نبٹنے کے لئے ایک اہم ہتھیار ہے۔حضرت محمد ﷺ نے کہا ہے کہ” اللہ تین لوگوں کی دعاﺅں کو کبھی مسترد نہیں کرے گا۔ پہلا والد کی دعا ، دوسرا روزے دار کی دعا ،اور تیسرا مسافر کی دعا”۔ہم رمضان میں اکثر اپنی ماں ، بہنوں اور گھر میں کام و کاج کرنے والوں کو بھول جاتے ہیں جوہمارے لئے افطار تیار کرنے میں اچھا خاصا وقت صرف کر دیتے ہیں۔ ہمیں خیال رکھنا چاہئے کہ انہیں بھی عبادت کا موقعہ ملے اور وہ عبادت سے محروم نہ رہیں۔
اسلام مذہب میں جھوٹ بولنے کے خلاف سخت الفاظ استعمال کئے گئے ہیں۔لہذاٰ رمضان میں ہمیں جھوٹی باتوں سے گریز کرنا چاہئے ۔ لیکن اکثر دیکھا گیا ہے کہ ہم روزے کی حالت میں جھوٹ بول کر اپنے آپ کو سُر خرو ثابت کرنا چاہتے ہیں۔ مثلاً چند غریبوں کو رمضان کی امداد دے کر اخبارات میں تصویروں کا شائع کروانا یا کاروبار کے لین دین میں جھوٹ کا سہارا لینے سے گریز کرنا چاہئے۔ حضرت محمد ﷺ نے کہا ہے کہ ” اللہ کو اس انسان کے بھوک و پیاس سے کوئی مطلب نہیں جو روزے کی حالت میں جھوٹ اور غلط بیانی سے کام لیتا ہو”۔
رمضان میں تین ایسے سماجی طریقے ہیں جو رمضان کی اہمیت اور اس کی فضیلت کا احساس دلاتا ہے۔ افطار کا اہتمام کرناایک اہم سماجی طریقہ ہے اورجس کا اہتمام خاص کر مساجد میں کرنا چاہئے ۔لیکن اس بات کا دھیان رکھنا چاہئے کہ افطار پارٹی کے دوران اسٹیج کا سجانا یا بہترین کھانوں کا انتظام کرنا اسلام کی سادگی اور اعتدال پسندی کے خلاف ہے۔اعتکاف کے روحانی پسِ منظر میں مسجد میںرمضان کے آخری دس دن بیٹھنا ایک اہم عمل ہے ۔
اسلامی مہینے کے آخری عشرے کی طاق راتوں میں سے ایک رات شب قدر کہلاتی ہے جو بہت ہی خیر و برکت والی رات ہے۔قرآن پاک میں اس رات کو ہزار مہینوں سے افضل بتایا گیا ہے۔ اللہ تعالیٰ فرماتا ہے ” بے شک ہم نے اس (قرآن) کو شب قدر میں اتارا ہے اور تم کیا جانو شب قدر کیا ہے شب قدر (فضیلت ، و برکت اور اجر و ثواب میں) ہزار مہینوں سے بہتر ہے۔ اس (رات) میں فرشتے اور روح الا مین (جبرائیل) اپنے رب کے حکم سے (خیر و برکت کے) ہر امر کے ساتھ اترتے ہیں۔ یہ رات طلوع فجر تک سراسر سلامتی ہے۔” (سورةالقدر)ہمیں اس رات کو خوب عبادت کرنی چاہئے اور اللہ سے اپنی گناہوں کی معافی مانگنی چاہئے۔
رمضان کے اس مبارک مہینے میں زیادہ تر مسلمان خوب عبادت کرتے ہیں اور اس مہینے میں ثواب بھی کماتے ہیں۔ لیکن آج کل کی بھاگتی زندگی میں ہم کہیں نہ کہیں گمراہ ہوجاتے ہیں اور ہم اپنا جائزہ لینا بھول جاتے ہیں۔ جب انسان اپنا امتحان خود لیتا ہے تو اسے اس بات کا علم ہوتا ہے کہ اس کے اندر کیا خامیاں اور خوبیاں ہیں۔اسی طرح رمضان میں اگر ہم اپنا جائزہ لیں تو ہمیں اپنی خوبیوں اورخامیوں کا پتہ چلے گا۔جس کی وجہ سے ہم ان غلطیوں کو دہرانے سے گریز کریں گے اور اس طرح ہم ایک نیک اور صالح انسان بن کر اچھے مسلمان بن جا ئیں گے۔ اللہ ہمارے گناہوں کو معاف فرمائے اور ہمیں نیک انسان بننے کی توفیق عطا کرے۔آمین

www.fahimakhter.com

Facebook Comments