نئی دہلی:نربھیا عصمت دری کیس میں آج کا دن بہت ہی خاص مانا جارہا ہے چونکہ ایک طرف جہاں سپریم کورٹ نے آج ایک مجرم اکشے کی نظرثانی کی عرضی کو خارج کردیا وہیں دوسری طرف پٹیالہ ہاوس کورٹ میں سزائے موت کا فرمان یعنی ڈیتھ وارنٹ جاری کرنے کے لئے دائر عرضی پر بھی سماعت ہوئی۔سماعت کے دوران جج کو سپریم کورٹ ک فیصلے سے واقف کرایاگیا ،اس کے بعد پٹیالہ ہاوس کورٹ نے کہا کہ آئندہ سات جنوری کو اگلی سماعت ہوگی اور اس بیچ مجرموں کو جتنے بھی قانونی اختیار ہیں سب کو استعمال کرلیں ،پھر اس کے بعد کوئی قانونی راستہ بچے نہیں ۔تو کل ملا کر نربھیا کے مجرموں کو ایک اور موقع ملا ہے جو آخری دور کہلائے گا۔ادھر تہاڑ جیل انتطامیہ سے نیا حلف نامہ داخل کرنے کو کہا ہے،وہیں سات جنوری کو پھانسی کا اعلان ممکن ہے۔
ادھر ایک بڑی خبر یہ بھی رہی کہ ہائی کورٹ کے جج نے کہا کہ ہر مجرم کو وکیل ملنا چاہیے ،اور ایک مجرم مکیش نے کہا کہ وہ رحم کی درخواست کیلئے عرضی نہیں دے گا۔سماعت کے دوران جج نے کہا جو قانونی عمل ہے وہ پورا کیا جائے،ادھر مجرموں کے وکیل نے کورٹ کے سامنے کہا کہ وہ جلد بازی میں کوئی فیصلہ نے سنایا جائے۔ادھر نربھیا کی ماں نے جج سے کہا کہ ڈیتھ وارنٹ جاری کیا جائے تاکہ انتظار کا سفر تمام ہو۔اور انصاف ملے۔ادھر ونے نام کے مجرم نے کہا کہ وہ رحم کی درخواست کی عرضی داخل کریں گے۔مجرموں کے وکیل اے پی سنگھ نے ہر ممکن کیس کو مزید آگے بڑھانے کی کوشش کی ہے۔جس میں وہ کامیاب ہوگئے ہیں۔

Facebook Comments